Akkh Ladale Re

(dil hain darwesho ki mehandi - 2
jismein hain shola
jismein hain bijli) - 2
peero jaisa ishq hain mera
abhi andhera abhi savera
(akkh ladale ladale
akkh ladale re ) - 3

(yeh ishq ibadat hain
ismein hi raahat hain
yeh rab ki rehmat hain
ise pana jannat hain) - 2
maine maangi teri mannnat - 2
dekh tujhe bhi milegi jannat
(akkh ladale ladale
akkh ladale re ) - 3

Kal Bhor Bhaye Hari Jaayenge

kal bhor bhaye
kal bhor bhaye hari jaayenge - 2
ham ro ro rain bitaayenge - 2
kal bhor bhaye

hari jaayenge mukh mor mor - 2
prabhuu aisi kar kal ho na bhor - 2
jo chale gaye
jo chale gaye mere kishor
ye nayan bahut dukh paayenge
ham ro ro rain bitaayenge - 2

kal bhor bhaye

kya hari honge duur kabhi - 2
yuun puuchh rahe man praan sabhi - 2
adharon pe naam nainon mein chhabi - 2
rom rom gun gaayenge
ham ro ro rain bitaayenge - 2

kal bhor bhaye

Jivan Ke Doraahe Pe Khade Sochate Hain Ham

jivan ke doraahe pe khade sochate hain ham
jaayein to kidhar jaayein - 2
taane hai dil idhar ko to khinche udhar qadam
jaayein to kidhar

tere siva duniya mein koyi (nahin apana) - 2
kya jaagate kya sote dekha (tera sapana) - 2
ab aise tu aankhon mein hai jaise koyi bharam
jaayein to kidhar

har mod pe deta hai ye (sansaar duhaayi) - 2
har gaam pe deta hai mera (pyaar duhaayi) - 2
is raaste mandir hai to us raaste dharam
jaayein to kidhar

Tum Meri Zindagi

chi:
ye dard zindagi kaa kab tak koi sambhaale
maajhi ye naav kar de tuufaan ke havaale

la:
tuufaan men ghiraa hai bekas kaa aashiyaanaa
do dil bichhad rahe hain o aasamaan vaale

tum meri zindagi men tuufaan banake aaye
chhote se ek dil men armaan banake aaye - 2

bujhate hue diye ki dhire se lau badhaa di - 2
begaane zindagi men yuun daan banake aaye - 2
chhote se ek dil men

majabuur dil ko kitani muddat se aarazuu thi - 2
viraan ghar men koi mahamaan banake aaye - 2
chhote se ek dil men

Deewani

Kaun samjhega un ka dard bhala
Jin ke dhadkan ne chot khaayi hai
Log kehte hain yahaan ishq jise
Aisa lagta hai bewafaai hai

(deewani, deewani) 4x

Mujhe laakh samjhaaya

(deewani, deewani)

Dil ne mere

(deewani, deewani)

Khali jaam liye baithe ho

Khaali jaam liye baithe ho, Khaali jaam liye baithe ho, un aankhon ki baat karo
Raat bahut hai, pyaas bahut hai, barsaaton ki baat karo, khaali jaam liye baithe ho

Jo peekar mast huey hain un ke zikr se kya haasil
Jo peekar mast huey hain un ke zikr se kya haasil, un ke zikr se kya haasil
Jin tak jaam nahi pahuncha hai un pyaason ki baat karo
Raat bahut hai, pyaas bahut hai, barsaaton ki baat karo, khaali jaam liye baithe ho

حَسَن کوزہ گر (٢)

Verses

حَسَن کوزہ گر (٢)

اے جہاں زاد،
نشاط اس شبِ بے راہ روی کی
میں کہاں تک بھولوں؟
زور ِ مَے تھا، کہ مرے ہاتھ کی لرزش تھی
کہ اس رات کوئی جام گرا ٹوٹ گیا _____

تجھے حیرت نہ ہوئی!
کہ ترے گھر کے دریچوں کے کئ شیشوں پر
اس سے پہلے کی بھی درزیں تھیں بہت __
تجھے حیرت نہ ہوئی!

اے جہاں زاد،
میں کوزوں کی طرف، اپنے تغاروں کی طرف
اب جو بغداد سے لوٹا ہوں،
تو مَیں سوچتا ہوں _____
سوچتا ہوں: تو مرے سامنے آئینہ رہی
سر ِ بازار، دریچے میں، سر ِبستر ِ سنجاب کبھی
تو مرے سامنے آئینہ رہی،
جس میں کچھ بھی نظر آیا نہ مجھے
اپنی ہی صورت کے سوا
اپنی تنہائی ِ جانکاہ کی دہشت کے سوا!
لکھ رہا ہوں تجھے خط
اور وہ آئینہ مرے ہاتھ میں ہے
اِس میں کچھ بھی نظر آتا نہیں
اب ایک ہی صورت کے سوا!
لکھ رہا ہوں تجھے خط
اور مجھے لکھنا بھی کہاں آتا ہے؟
لوح آئینہ پہ اشکوں کی پھواروں ہی سے
خط کیوں نہ لکھوں؟

اے جہاں زاد،
نشاط اس شبِ بے راہ روی کی
مجھے پھر لائے گی؟
وقت کیا چیز ہے تو جانتی ہے؟
وقت اِک ایسا پتنگا ہے
جو دیواروں پہ آئینوں پہ،
پیمانوں پہ شیشوں پہ،
مرے جام و سبو، میرے تغاروں پہ
سدا رینگتا ہے

رینگتے وقت کے مانند کبھی
لوٹ آئے گا حَسَن کوزہ گر ِ سوختہ جاں بھی شاید!

اب جو لوٹا ہوں جہاں زاد،
تو میں سوچتا ہوں:
شاید اس جھونپڑے کی چھت پہ یہ مکڑی مری محرومی کی___
جسے تنتی چلی جاتی ہے، وہ جالا تو نہیں ہوں مَیں بھی؟
یہ سیہ جھونپڑا مَیں جس میں پڑا سوچتا ہوں
میرے افلاس کے روندے ہوئے اجداد کی
بس ایک نشانی ہے یہی
ان کے فن، ان کی معیشت کی کہانی ہے یہی
مَیں جو لوٹا ہوں تو وہ سوختہ بخت
آکے مجھے دیکھتی ہے
دیر تک دیکھتی رہ جاتی ہے
میرے اس جھونپڑے میں کچھ بھی نہیں ____
کھیل اِک سادہ محبّت کا
شب و روز کے اِس بڑھتے ہوئے کھوکلے پن میں جو کبھی
کھیلتے ہیں
کبھی رو لیتے ہیں مل کر، کبھی گا لیتے ہیں،
اور مل کر کبھی ہنس لیتے ہیں
دل کے جینے کے بہانے کے سوا ___
حرف سرحد ہیں، جہاں زاد، معانی سرحد
عشق سرحد ہے، جوانی سرحد
اشک سرحد ہیں، تبسّم کی روانی سرحد
دل کے جینے کے بہانے کے سوا اور نہیں ____
(دردِ محرومی کی،
تنہائی کی سرحد بھی کہیں ہے کہ نہیں؟)

میرے اِس جھونپڑے میں کتنی ہی خوشبوئیں ہیں
جو مرے گرد سدا رینگتی ہیں
اسی اِک رات کی خوشبو کی طرح رینگتی ہیں ____
در و دیوار سے لپٹی ہوئی اِس گرد کی خوشبو بھی ہے
میرے افلاس کی، تنہائی کی،
یادوں، تمنّاؤں کی خوشبو ئیں بھی،
پھر بھی اِس جھونپڑے میں کچھ بھی نہیں ___
یہ مرا جھونپڑا تاریک ہے، گندہ ہے، پراگندہ ہے
ہاں، کبھی دور درختوں سے پرندوں کے صدا آتی ہے
کبھی انجیروں کے، زیتونوں کے باغوں کی مہک آتی ہے
تو مَیں جی اٹھتا ہوں
تو مَیں کہتا ہوں کہ لو آج نہا کر نکلا!
ورنہ اِس گھر میں کوئی سیج نہیں، عطر نہیں ہے،
کوئی پنکھا بھی نہیں،
تجھے جس عشق کی خو ہے
مجھے اس عشق کا یارا بھی نہیں!

تو ہنسے گی، اے جہاں زاد، عجب بات
کہ جذبات کا حاتم بھی مَیں
اور اشیا کا پرستار بھی مَیں
اور ثروت جو نہیں اس کا طلب گار بھی مَیں!
تو جو ہنستی رہی اس رات تذبذب پہ مرے
میری دو رنگی پہ پھر سے ہنس دے!
عشق سے کس نے مگر پایا ہے کچھ اپنے سوا؟
اے جہاں زاد،
ہے ہر عشق سوال ایسا کہ عاشق کے سوا
اس کا نہیں کوئی جواب
یہی کافی ہے کہ باطن کے صدا گونج اٹھے!

اے جہاں زاد
مرے گوشہء باطن کی صدا ہی تھی
مرے فن کی ٹھٹھرتی ہوئی صدیوں
کے کنارے گونجی
تیری آنکھوں کے سمندر کا کنارا ہی تھا
صدیوں کا کنارا نکلا
یہ سمندر جو مری ذات کا آئینہ ہے
یہ سمندر جو مرے کوزوں کے بگڑے ہوئے،
بنتے ہوئے سیماؤں کا آئینہ ہے
یہ سمندر جو ہر اِک فن کا
ہر اِک فن کے پرستار کا
آئینہ ہے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer