جسے بھی دُھوپ بار آور لگی تھی

Verses

جسے بھی دُھوپ بار آور لگی تھی
اُسے اک بانجھ پرچھائیں ملی تھی

تھکن کوئی مجھے کیا رنج دیتی
سڑک خود خستہ خستہ چل رہی تھی

میں اپنے آپ کو بھی چاہتا کیا
جہاں میں تھا وہاں بیگانگی تھی

عیاں تھی رہ گذر سے بھی جُدائی
مسافر کی جگہ دُھول اڑ رہی تھی

ظفر میں اِس لیے نغمہ سرا ہوں
مری ایجاد رونے سے ہوئی تھی

جبیں پہ دھوپ سی آنکھوں میں کچھ حیا سی ہے

Verses

جبیں پہ دھوپ سی آنکھوں میں کچھ حیا سی ہے
تو اجنبی ہے مگر شکل آشنا سی ہے

خیال ہی نہیں‌ آتا کسی مصیبت کا
ترے خیال میں ہربات غم ربا سی ہے

جہاں میں یوں تو کسے چین ہے مگر پیارے
یہ تیرے پھول سے چہرے پہ کیوں‌ اداسی ہے

دلِ غمیں سے بھی جلتے ہیں‌شادمانِ حیات
اسی چراغ سے اب شہر میں‌ہوا سی ہے

ہمیں‌سے آنکھ چُراتا ہے اس کا ہر ذرہ
مگر یہ خاک ہمارے ہی خوں کی پیاسی ہے

ادس پھرتا ہوں میں جس کی دھن میں برسوں سے
یونہی سی ہے وہ خوشی بات وہ ذرا سی ہے

چہکتے بولتے شہروں کو کیا ہوا ناصر
کہ دن کو بھی مرے گھر میں وہی اداسی ہے

ہر نفس رنج کا اِشارہ ہے

Verses

ہر نفس رنج کا اِشارہ ہے
آدمی دُکھ کا استعارہ ہے

مجھ کو اپنی حدوں میں رہنے دے
میں سمندر ہوُں توُ کنارا ہے

اجنبی! شب کو راستہ نہ بدل
توُ میری صُبح کا ستارا ہے

یا سماعت کی خود فریبی تھی
یا تیری یاد نے پکارا ہے

شامِ شب خوں نے دشت سے پوچھا
کس نے رختِ سفر اُتارا ہے

جانے کیوں سوگوار سناّٹا
موت کی زندگی سے پیارا ہے

عُمر بھر بے چَراغ رستوں میں
زِندگی نے ہمیں گزارا ہے

چاہتوں کی بِساط پر "محسن"
دل بڑی مُشکلوں سے ہارا ہے

Chaukhat Pe Tumhari

chaukhat pe tumhari hum dum tod jaayenge - 2
jab hum nahi honge tumhe hum yaad aayenge
chaukhat pe tumhari hum dum tod jaayenge
marna hai toh jaldi karo rone ko aayenge - 2
rone ko hum pados ki sakhiya bhi laayenge
marna hai toh jaldi karo rone ko aayenge

Bajne Lage Hain

Alka: haaa, haaa
bajne lage hain shank se mann mein
lagne lage hain pankh se tan mein
haahn, chali (?) main tho, chali, chali,
khil gayi kali, kali,
mil gayi prem dali, aah, aah, aah, aah
haa, haa, haa (2)

Udit: hay hay haye haye,
na jaane kya tujh ko hone lagaa hai
lagtha hai dil thera khone lagaa hai
hoo, hooh (2)

Alka: dheere se milne mere khuch kahaa
chup ke se sunle ge seene tara

Udit: mere sang baazi hai
kya tum chaha thi gori

لاغر اتنا ہوں کہ گر تو بزم میں جا دے مجھے

Verses

لاغر اتنا ہوں کہ گر تو بزم میں جا دے مجھے
میرا ذمہ، دیکھ کر گر کوئی بتلا دے مجھے

کیا تعجب ہے کہ اُس کو دیکھ کر آجائے رحم
وا ں تلک کوئی کسی حیلے سے پہنچا دے مجھے

منہ نہ دکھلاوے، نہ دکھلا، پر بہ اندازِ عتاب
کھول کر پردہ ذرا آنکھیں ہی دکھلا دے مجھے

یاں تلک میری گرفتاری سے وہ خو ش ہے کہ مَیں
زلف گر بن جاؤں تو شانے میں اُلجھا دے مجھے

Khili Chaandni hamein Kah Rahi

aaaa

khili chaaNdni hamein kah rahi gaao aaj mil ke
is dil ke tumhi ho jaanam
khili poornimaa chali ye hawaa shabnam yahaaN barse
is dil ke tumhi ho jaanam
gaaye meraa man yooN hi raat din
phir bhi pyaar tarse
ha aa, vahi bhoomi hai, vahi aasmaaN
apnaa dukh bhalaa kisko sunaayen
khili chaaNdni hamein kah rahi gaao aaj mil ke
is dil ke tumhi ho jaanam

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer